پشاور- پشاور پریس کلب میں سیمینار سے روکے جانے کے بعد پشتون تحفظ موومنٹ نے پریس کلب کے سامنے سڑک پر سیمینار منعقد کیا اور احتجاج بھی کیا۔

پشتون تحفظ موومنٹ نے بدھ کے روز پشاور پریس کلب میں ایک سیمینار منعقد کرنا تھا جس کا مقصد خیبر ایجنسی کی تحصیل لنڈی کوتل کے خوگہ خیل قبیلے اور نیشنل لاجسٹک سیل کے درمیان زمین اور کاروبار کے تنازعے کے بارے میڈیا کو بریف کرنا تھا۔ لیکن پریس کلب میں  سمینار کی اجازت نہیں دی گئی اور بعد ازاں  انہوں نے یہ سیمینار فٹ پاتھ پر منعقد کیا۔

پشتون تحفظ تحریک کے کور کمیٹی کے ممبر فضل ایڈوکیٹ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے دو روز قبل پشاور پریس کلب سے سیمینار کے لئے اجازت لی تھی اور پریس کلب کا فیس بھی جمع کیا گیا تھا  مگر بعد میں پریس کلب انتظامیہ نے سمینار کے لئے جگہ نہ دینے کی اطلاع دی گئی جوکہ نہایت افسوسناک ہے ۔

فضل ایڈوکیٹ نے کہا کہ قبائلی علاقوں کو پاکستان کے ریاستی دہشتگردی نے پہلے سے بہت متاثر کیا ہے۔ وہاں کاروبار کا کوئی سٹرکچر نہیں ہے۔ صرف ٹرانسپورٹ ہی وہ واحد بزنس ہے جس کے ذریعے قبائلی عوام اپنا گزر بسر کر رہے ہیں۔ اب اسے بھی ان سے چھین کر نیشنل لاجسٹک سیل کے حوالے کیا جا رہا ہے جو کہ پشتونوں کا معاشی قتل ہے۔

فضل ایڈوکیٹ نے انکشاف کیا کہ پریس کلب کی انتظامیہ پر پاکستان کے سکیورٹی اداروں کی جانب سے پریشر آیا جس کے بعد پریس کلب انتظامیہ نے ہمیں پریس کلب کے اندر جانے سے روکا۔

پشاور پریس کلب کے باہر فٹ پاتھ پر پی ٹی ایم کا سیمینار۔ 23 جنوری 2019
پشاور پریس کلب کے باہر فٹ پاتھ پر پی ٹی ایم کا سیمینار۔ 23 جنوری 2019

پی ٹی ایم نے اپنا سیمینار پشاور پریس کلب کے سامنے فٹ پاتھ پر دریاں بچھا کر منعقد کیا ۔

سمینار سے خطاب میں پی ٹی ایم کے مرکزی رہنما ڈاکٹر سید عالم محسود نے کہا کہ پنجابی ریاست نے پشتونوں کو ہر حوالے سے تباہ کرنے کا بیڑا اٹھایا ہے لہذا پشتون قوم کو مذید منظم اور متحد ہوکر اس پنجابی ریاست کی ریاستی دہشتگردی اور پشتون دشمن پالیسوں کو شکست دینا ہوگا ۔

سید عالم محسود نے کہا کہ پشتون سرزمین پر پاکستان کی ریاستی دہشتگردی اور استعماری پالیسیوں کو کسی صورت میں قبول نہیں کریں گے ۔

Comments